Monday, April 25, 2011

Har Lehza Bashakal-aan Boot-e-ayaar Bar amad

About a year ago the recital at the bottom was added to this blog, however today Sabeen Mahmud has added this new and beautiful rendition which is in quite a different mood and contains lovely Urdu verses not heard in earlier performances. I have therefore added it to this old posting. A sure treat for Urdu lovers.



Har Lehza Bashakal-aan Boot-e-ayaar Bar amad, dil Burd-o-nihan Shud
Har Dam ba Libas-e-Digar-aan Yaar Bar amad, Geh Peer-o-Jawan Shud

--

ہر لحظہ وہ بتِ عیار ایک نئی ہی شکل میں ظاہر ہوتا ہے --- دل چھینتا ہے اور غائب ہو جاتا ہے۔
ہر دم وہ یار دوسروں کے لباس میں ظاہر ہوتا ہے -- کبھی بوڑھے کے روپ میں اور کبھی جوان کے۔


--------

The preamble in Urdu consists of verses that introduce the main poem of Mevlana Rumi. It helps set the tone and mood of the listener and at 3.13 minutes the main kalam begins. Farid Ayaz Qawwal has successfully demonstrated what is common in the sufiana words of various saints and poets with regards to similar ideas about revelation and mother earth. The thoughts about Mitti/Earth/Gil (Rumi *)/Maati (Kabir**) have all been beautifully expressed by Rumi, Kabir, Bulleh Shah, Baba Farid to mention a few. I leave the rest for you to enjoy and absorb.

*Rumi: Khud Kuza-o, Khud Kuzagar-o, Khud Gil-e-Kuza, Khud Rind-e-sobookash

**Kabir: Maati kahe kumbhar ko. Tu kya roondhe mohe. Ek din aisaa aayega. Mai roondhoo gi tohe

Share





هر لحظه به شكلي بت عيار بر آمد, دل برد و نهان شد
هر دم به لباس دگر آن يار بر آمد , گه پير و جوان شد

Har Lehza Bashakal-aan Boot-e-ayaar Bar amad, dil Burd-o-nihan Shud
Har Dam ba Libas-e-Digar-aan Yaar Bar amad, Geh Peer-o-Jawan Shud

ہر لحظہ وہ بتِ عیار ایک نئی ہی شکل میں ظاہر ہوتا ہے --- دل چھینتا ہے اور غائب ہو جاتا ہے۔
ہر دم وہ یار دوسروں کے لباس میں ظاہر ہوتا ہے -- کبھی بوڑھے کے روپ میں اور کبھی جوان کے۔

خود کوزہ و خود کوزہ گر و خود گلِ کوزہ, خود رندِ سبو کش
خود بر سرِ آں کوزہ خریدار برآمد, بشکست رواں شد

Khud Kuza-o, Khud Kuzagar-o, Khud Gil-e-Kuza, Khud Rind-e-sobookash
Khud Barsar-e aan Kuza Khareedar Bar amad, Bishkast Rawan Shud

Trans:

He is the vessel, he is its maker, and he is the clay used to make it,
He is the reveler quaffing drinking from it...
He too is the one who buys it, and breaks it, having drunk from it...

وہ خود ہی کوزہ ہے، خود ہی کوزہ بنانے والا اور خود ہی کوزہ کی مٹی -- اور خود ہی کوزے سے پینے والا۔
اور خود ہی اس کوزے کے خریدار کے طور پر ظاہر ہوتا ہے --- اور اس کیلیے اس کوزے کو توڑنا بھی جائز ہے۔ ني ني كه همو بود كه مي آمد و مي رفت --- هر قرن كه ديدي
تا عاقبت آن شكل عرب وار برآمد -- داراي جهان شد

وہی تھا جو ہرزمانے میں آتا رہا اور چاتا رہا - ہر زمانے نے دیکھا
لیکن بلآخر وہ ایک عرب (ص) کی شکل میں ظاہر ہوا -- اور وہی (ص) جہان کے بادشاہ ہیں۔ ني ني كه همو بود كه مي گفت انا الحق --- در صوت الهي
منصور نبود آن كه بر آن دار برآمد --- نادان به گمان شد

وہی تھا کہ جس نے کہا کہ میں ہی حق ہوں -- خدا کی آواز میں
وہ منصور نہیں تھا جو سولی پر ظاہر ہوا -- نادان اور نہ جاننے والوں کو یہی لگتا ہے کہ وہ منصور تھا۔ رومي سخن كفر نگفته است و نگويد --- منكر نشويدش
كافر بود آن كس كه به انكار برآمد --- از دوزخيان شد

رومی نے کبھی کفر کی بات نہیں کی اور نہ وہ کرتا ہے -- وہ منکر نہیں ہے
کافر تو وہ ہے جس نے انکار کیا تھا یعنی شیطان --- اور وہی دوزخیوں میں سے ہے

- MTauseefAmin

The creator and the creations are fully aligned. Symbolism and its parallels become second nature of the mystic artist who reads into the inner meaning of divine secrets creating an art that liberates the human soul. The art of the mystics always has the art of life. It has had the same echo through the ages, in different parts of the world.

- Muzaffar Ali - Painter and filmmaker who finds inspiration in Sufi poetry and music

2 comments:

Mr. Gogo said...

Thanks. Just started to look rumi poetry. Thanks again .

S.M. Faruq said...

its no doubt larger then life.

thumbs up for you guys who are participating in publish this.