Saturday, June 1, 2013

Oft, in the stilly night, Aksar Shab-e-Tanhai Mein, اکثر شبِ تنہائی میں



Poet: Thomas Moore (1779 - 1852 / Dublin / Ireland)
Poet (translation from English to Urdu): Nadir Kakorvi (born 1857)
Singer: Reshma
-(Born in Rajasthan to a Gypsy family in 1947)

Oft, in the stilly night,
Ere slumber's chain has bound me,
Fond memory brings the light
Of other days around me;
The smiles, the tears,
Of boyhood's years,
The words of love then spoken;
The eyes that shone,
Now dimm'd and gone,
The cheerful hearts now broken!
Thus, in the stilly night,
Ere slumber's chain hath bound me,
Sad memory brings the light
Of other days around me.

When I remember all
The friends, so link'd together,
I've seen around me fall,
Like leaves in wintry weather;
I feel like one
Who treads alone
Some banquet-hall deserted,
Whose lights are fled,
Whose garlands dead,
And all but he departed!
Thus, in the stilly night,
Ere slumber's chain has bound me,
Sad memory brings the light
Of other days around me.


---------------------



Aksar shab-e-tanhai mein, Kuch dair pehlay neend say
Guzri hui dil-chuspian, Beetay huay din aish k
Buntay haiN shama-e-zindagi, Aur Daaltay haiN roshni
Meray dil-e-sud chaak per...

Woh bachpan aur wo saadgi, Woh rona woh hansna kabhi
Phir woh jawani kay mazay, Woh dil lagi woh qehqahay
Woh ishq woh ehd-e-wafa, Woh wada or woh shukriya
Woh lazzat-e-bazm-e-tarb, Yaad aati hain ik aik sab.......

Dil ka kanwal jo roz-o-shab, rehta shagufta tha so ab
Os ka yeh ab tar haal hai, ik sabza-e-pamaal hai
Ik phool kumlaya hua, sookha hua bikhra hua
Ronda parda hai khaak per...

Yunhi shab-e-tanhai main, kuch dair pehlay neend say
Guzri hui na-kaamiyan, beetay huay din ranj kay
Bantay hain shama-e-baykasi, aur Daltay hain roshni
Un hasraton ki qabr per...

jo aarzooain pehlay theen, phir Gham say hasrat ban gaein
Gham dooston k faut ka, un ki jawaan mout ka
lay daikh sheeshay main meray, un hasraton ka khoon hai
jo gardish-e-ayyam say, jo qismat-e-nakaam say
ya aish-e-gham anjaam say, marg-e-but-e-gulfaam say
khud dil mein meray mer gaein, kis tarha paaon main hazeen
qaaboo dil-e-sadchaak per..

jab aah un ahbab ko, main yaad ker uthta hoon jo
yun mujh say pehlay uthh gaye, jis tarha taaier (birds) baaGh k
ya jesay phool aur pattiyan, gir jain sab qabl khizan
aur Khushk reh jaye shajr...

us waqt tanhai meri, bun ker mujassam baykasi
ker deti hai pesh-e-nazar, ho haq sa ik weeran ghar
berbaad jis ko chor ka, sub rehnay walay chal basay
TooTay kiwaaR or khiRkiyaN, chat (ceiling) k Tapaknay k nishaN
pernaalay haiN rozan nahin, yeh hall hain aaNgan nahin
perday nahiN, chilman nahin, ik shama tak roshan nahin
meray siwa jiss main koi, jhankay na bhoolay say koi
woh khana-e-shali hai dil, poochay na jis ko dev koi
ujra hua weeran ghar...

aksar shab-e-tanhai main, kuch dair pehlay neend say
guzri hui dil-chuspian, beetay huay din aish k
bantay haiN shama-e-zindagi, aur Daltay haiN roshni
meray dil-e-sud chaak per...

---------------

اکثر شبِ تنہائی میں
کچھ دیر پہلے نیند سے
گزری ہوئی دلچسپیاں
بیتے ہوئے دن عیش کے
بنتے ہیں شمعِ ذندگی
اور ڈالتے ہیں روشنی

میرے دلِ صد چاک پر

وہ بچپن اوروہ سادگی
وہ رونا وہ ہنسنا کبھی
پھر وہ جوانی کے مزے
وہ دل لگی وہ قہقہے
وہ عشق وہ عہدِ و فا
وہ وعدہ اور وہ شکریہ
وہ لذتِ بزمِ طرب
یاد آتے ہیں ایک ایک سب

دل کا کنول جو روز و شب
رہتا شگفتہ تھا سو اب
اسکا یہ ابتر حال ہے
اک سبزۂ پا مال ہے
اک پھو ل کُملایا ہوا
ٹوٹا ہوا بکھرا ہوا

روندا پڑا ہے خاک پر

یوں ہی شبِ تنہائی میں
کچھ دیر پہلے نیند سے
گزری ہوئی ناکامیاں
بیتے ہوئے دن رنج کے
بنتے ہیں شمعِ بےکسی
اور ڈالتے ہیں روشنی

ان حسرتوں کی قبر پر

جوآرزوئیں پہلے تھیں
پھر غم سے حسرت بن گئیں
غم دوستو ں کی فوت کا
ان کی جواناں موت کا

لے دیکھ شیشے میں مرے
ان حسرتوں کا خون ہے
جو گرد شِ ایام سے
جو قسمتِ ناکام سے
یا عیشِ غمِ انجام سے
مرگِ بتِ گلفام سے
خود میرے غم میں مر گئیں
کس طرح پاؤں میں حزیں

قابو دلِ بےصبر پر

جب آہ ان احباب کو
میں یاد کر اٹھتا ہوں جو
یوں مجھ سے پہلے اٹھ گئے
جس طرح طائر باغ کے
یا جیسے پھول اور پتیاں
گر جائیں سب قبل از خزاں

اور خشک رہ جائے شجر

اس وقت تنہائی مری
بن کر مجسم بےکسی
کر دیتی ہے پیشِ نظر
ہو حق سااک ویران گھر
ویراں جس کو چھوڑ کے
سب رہنے والے چل بسے
ٹو ٹے کواڑ اور کھڑ کیاں
چھت کے ٹپکنے کے نشاں
پرنالے ہیں روزن نہیں
یہ ہال ہے، آ نگن نہیں
پردے نہیں، چلمن نہیں
اک شمع تک روشن نہیں
میرے سوا جس میں کوئی
جھا نکے نہ بھولے سے کبھی
وہ خانۂ خالی ہے دل
پو چھے نہ جس کو دیو بھی

اجڑا ہوا ویران گھر

یوں ہی شب تنہائی میں
کچھ دیر پہلے نیند سے
گزری ہوئی دلچسپیاں
بیتے ہوئے دن عیش کے
بنتے ہیں شمعِ زندگی
اور ڈالتے ہیں روشنی

میرے دل صد چاک پر

(نادر کاکوروی)

4 comments:

SohaIb said...

sir, buhat hi khoob, thanks for upload....
its awesome poem, no match..

Huzaif said...

Beautiful indeed

shadab said...

please upload this song or video

saorabh said...

aha.. mazaa aa gaya.. thanks for uploading it..