Friday, October 1, 2010

Taskeen ko Ham na Royen - Iqbal Bano recites Ghalib - تسکیں کو ہم نہ روئیں


Iqbal Bano recites Ghalib

Taskin ko ham na royen jo zauq-e-nazr mile,
Huraan-e-khuld mein teri surat magar mile.

Apni gali mein mujhko na kar dafan baad-e-qatal,
Mere pate se khalaq ko kyon tera ghar mile?

Saqi gari ki sharm karo aaj warna ham,
Har shab piya hi karte hain, mai jis qadar mile.

Tujh se to kuchh kalaam nahin lekin ai nadim!
Mera salaam kaheyo agar naama bar mile.

Tum ko bhi ham dikhaenge Majnun ne kya kiya,
Fursat kashaakash-e-gham-e-pinhaan se gar mile.

Laazim nahin ke khizar ki ham pairwi karen,
Maana ke ek bazurg hamen ham safar mile.

Ai saaknaan-e-kucha-e-dildaar dekhna,
Tum ko kahin jo Ghalib-e-aashufta sar mile.

Taskeen : Consolation,
Zauq - Taste,
Hoor - Fairy (Hourise of Paradise)
Khuld- Paradise
Dafn- burial
Khalk- People,
Kalam:speech,word;commandment
Nadeem- an intimate friend from whom somebody is inseparable
Nama bar-Letter bearer
----


تسکیں کو ہم نہ روئیں‘ جو ذوقِ نظر ملے
حورانِ خلد میں تری صورت مگر ملے

اپنی گلی میں‘ مجھ کو نہ کر دفن‘ بعد قتل
میرے پتے سے خلق کو کیوں تیرا گھر ملے؟

ساقی گری کی شرم کرو آج‘ ورنہ ہم
ہر شب پیاہی کرتے ہیں مے‘ جس قدر ملے

تجھ سے تو کچھ کلام نہیں‘ لیکن اے ندیم!
میرا سلام کہیو‘ اگر نامہ بر ملے

تم کو بھی ہم دکھائیں کہ‘ مجنوں نے کیا کیا
فرصت کشاکشِ غمِ پنہاں سے گر ملے

لازم نہیں کہ‘ خضر کی ہم پیروی کریں
جانا کہ‘ اک بزرگ ہمیں ہم سفر ملے

اے ساکنانِ کوچۂ دلدار! دیکھنا
تم کو کہیں جو غالبؔ آشفتہ سر ملے

1 comment:

Tahereh Sheerazie said...

letter bearer - nama bar